1. محترم مہمان السلام علیکم! فروغ نعت فورم میں سوشل شیئر کا آپشن شامل کیا گیا ہے۔ جب آپ کوئی نیا موضوع شروع کرتے ہیں تو موضوع کے شروع ہو جانے پر موضوع کے اوپر یہ آپشن ظاہر ہوتا ہے اس آپش پر کلک کرنے سے مختلف سوشل نیٹ ورکس کے آئکان ظاہر ہوتے ہیں آپ اپنی پسند کے نیٹ ورک پر اسے شائع کر سکتے ہیں۔میری دوستوں سے درخواست ہے کہ جب بھی کوئی کلام فورم میں شامل کریں تو سوشل شیئر بٹن کے ذریعہ اس کو فیس بک ، ٹویٹر اور گوگل پلس وغیرہ پر بھی شیئر کر دیا کریں اور اگر ممکن ہو تو جس کا کلام ہو اس کی فیس بک وال پر بھی شیئر کیا کریں تاکہ فورم کی ٹریفک میں اضافہ ہو اور لوگوں کی آمد و رفت رہے۔ جوکہ اس فورم کی مقبولیت کے لیے بہت ضروری ہے۔

تضمین کلام رضا چمک تجھ سے پاتے ہیں سب پانے والے (سید اشرف میاں)

'انتخابِ تضمینات' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد شاہد رضا خان, ‏نومبر 29, 2017۔

  1. محمد شاہد رضا خان

    محمد شاہد رضا خان Member رکن فروغ نعت

    پیغامات:
    74
    شبِ تار میں سُوئی دِکھلانے والے
    زمیں ، چاند ، سورج کو دمکانے والے
    اندھیروں سے لعل و گہر لانے والے
    ’’چمک تجھ سے پاتے ہیں سب پانے والے
    مرا دل بھی چمکا دے چمکانے والے‘‘

    کلامِ الٰہی ہمیشہ رہے گا
    جو اونچا ہمیشہ تھا اونچا رہے گا
    رَفعنا کا جھنڈا چمکتا رہے گا
    ’’رہے گا یوں ہی اُن کا چرچا رہے گا
    پڑے خاک ہوجائیں جل جانے والے‘‘

    وہ ہے سامنے سبز گنبد سنبھلنا
    اگر چاہتے ہو مقدر سمجھنا
    تو طیبہ کی گلیوں میں پلکوں سے چلنا
    ’’حرم کی زمیں اور قدم رکھ کے چلنا
    ارے سر کا موقع ہے او جانے والے‘‘

    زمانے کے کیوں کھائیں ہم جاکے دھکّے
    غلام اُن کے در کا مزہ کیوں نہ چکھّے
    وہیں جاکے طیبہ میں گر جائے تھک کے
    ’’مدینے کے خطّے خدا تجھ کو رکھّے
    غریبوں فقیروں کے ٹھہرانے والے‘‘

    کریمی کو لے کر سخاوت وہ آئی
    جلو میں لیے اپنے الفت وہ آئی
    سرِ حشر رحمت کی صورت وہ آئی
    ’’ آئی شفاعت کی ساعت اب آئی
    ذرا چین لے میرے گھبرانے والے‘‘

    رسالت کی عزت کے کاموں سے الجھیں
    زیارت سے الجھیں ، سلاموں سے الجھیں
    خدا دوست ولیوں کے ناموں سے الجھیں
    ’’ترا کھائیں تیرے غلاموں سےالجھیں
    ہیں منکر عجب کھانے غرّانے والے‘‘

    جو آئے سبھی کے لیے بن کے رحمت
    جو دشمن کی کرتے تھے جاکر عیادت
    قمیص اپنی دے دی بہ شانِ سخاوت
    ’’برستا نہیں دیکھ کر ابرِ رحمت
    بدوں پر بھی برسادے برسانے والے‘‘

    بہت ناتواں ہوں مرا ہاتھ لے لو
    میں دشمن کے نرغے میں ہوں ساتھ لے لو
    گرا پڑ رہا ہوں مرا ہاتھ لے لو
    ’’میں مجرم ہوں آقا مجھے ساتھ لے لو
    کہ رستے میں ہیں جابجا تھانے والے‘‘

    بَلاؤں سے گر چاہو بچنا بچانا
    تو اشرفؔ سے کہنا کہ نعتیں سنانا
    کہ اُس نے رضا ؔ سے سنا ہے ترانہ
    ’’رضاؔ نفس دشمن ہے دم میں نہ آنا
    کہاں تم نے دیکھے ہیں چندرانے والے‘‘